gototopgototop
We have 47 guests online

پاکستان

ہندوستان: شرعی عدالتیں اور ان کے فتوے غیر قانونی PDF Print E-mail
Written by nasir   
Tuesday, 08 July 2014 13:18

ہندوستان سپریم کورٹ نے ملک کی شرعی عدالتوں اور ان کے فتوے غیر قانونی قرار دے دیئے۔ موصولہ رپورٹ کے مطابق ہندوستان کی سپریم کورٹ میں درخواست کی گئی تھی کہ ملک میں قائم شرعی عدالتیں عوام کے حقوق کی خلاف ورزی کر رہی ہیں اس لئے ان پر پابندی لگائی جائے۔ جس پر عدالت نے فریقین کا موقف سننے کے بعد  اپنے فیصلے میں قرار دیا کہ اسلام سمیت کوئی بھی مذہب ایسے ضابطوں سے معصوم افراد کو سزا دینے کی اجازت نہیں دیتا جنھیں قانونی طورپر منظوری حاصل نہ ہو۔ بلاشبہ فتوے کو اسلام میں اہمیت حاصل ہے لیکن اسے کسی انسان کے بنیادی حقوق پر اثر انداز ہونے کے لئے استعمال نہیں کیا جا سکتا۔  ہندوستانی عدالت نے قرار دیا کہ ملک میں قائم شرعی عدالتوں اور دارا لقضا کو آئینی منظوری حاصل نہیں ہے اور وہ ایسے کوئی فیصلے اور فتوے نہیں دے سکتے جن سے فرد کے حقوق کی خلاف ورزی ہوتی ہو۔  اس طرح کے فیصلے اور فتوے کالعدم اور غیر قانونی ہوں گے۔ واضح رہے کہ ہندوستان میں مسلمانوں کی زیادہ آبادی والے علاقوں میں شرعی عدالتیں قائم ہیں جو مختلف معاملات پر فتوے جاری کرتی ہیں۔

 

FORM_HEADER


FORM_CAPTCHA
FORM_CAPTCHA_REFRESH