gototopgototop
We have 23 guests online

پاکستان

عشق اور ایمان کا معجزہ
Written by ابنا   
Thursday, 25 December 2014 14:32

پاکستان کے صوبہ سندھ کے علاقے خیبرپور کی رہنے والی معذور بچی کو سید الشہدا ا کے حرم مطھر میں امام حسین علیہ السلام کی برکت سے خدا نے اسے شفا عنایت کی

 


پاکستان کے صوبہ سندھ کے علاقے خیبرپور کی رہنے والی معذور بچی ’’سمیرہ ولی محمد‘‘ کو سید الشہدا امام حسین (ع) علیہ السلام کے حرم مطھر سے اس وقت شفا نصیب ہوئی جب حالیہ دنوں اس کے والدین اسے کربلا لے کر گئے۔
پاکستان کی رہنے والی یہ کمسن شیعہ بچی پولیو کی وجہ سے بچپنے سے ہی اپنے پیروں پر چلنے کی طاقت نہیں رکھتی تھی اس کے والد اسے اپنے کندھوں پر اٹھا کر چلا کرتے تھے دو روز قبل جب اس کے والدین اسے کربلا لے کر گئے اور ویلچیئر پر رکھ کر ضریح مطہر کے پاس لے گئے ضریح مطھر کے پاس پہنچتے ہی بچی ویلچیئر سے خود بخود اٹھ کر ضریح مطہر کی جانب بڑھی اور ضریح کا بوسہ لیا۔
حرم مطہر میں شعبہ شرعی رہنمائی کے عہدہ دار شیخ حمزہ فتلاوی کا کہنا ہے کہ بروز اتوار صبح دس بجے ایک مرتبہ ضریح مطہر کے پاس شور مچا اور لوگوں نے خوشی میں درود پڑھنا شروع کر دیا کہ بچی کو شفا مل گئی۔ لوگوں نے اپنی آنکھوں سے دیکھا کہ یہ مفلوج اور معذور بچی جو اپنے پیروں پر کھڑی نہیں ہو سکتی تھی امام حسین علیہ السلام کی برکت سے خدا نے اسے شفا عنایت کی یہاں تک کہ بچی اپنے پاوں سے چل کر ضریح مطہر تک گئی۔
اس بچی کے والدین نے بتایا کہ خدا اور سید الشہدا(ع) پر ان کا ایمان اس بات کا باعث بنا کہ وہ پاکستان سے اپنی معذور بچی کو لے کر کربلا جائیں تاکہ ان کی بچی کو شفا نصیب ہو۔
انہوں نے مزید بتایا کہ انہوں نے اس بچی کی شفا یابی کے لیے پاکستان میں ہر ممکنہ کوشش کی اور کئی ہسپتالوں اور ڈاکٹروں کے پاس رجوع کیا جو بے نتیجہ ثابت ہوا اس کے بعد وہ اسے کربلا لے کر گئے۔
بچی کے والدین نے بچی کی شفایابی کے سلسلے میں بیان کرتے ہوئے بتایا: نجف میں زیارت کرنے کے بعد آج ہم بچی کی شفایابی کے لیے پہلے حرم حضرت ابو الفضل العباس (ع) میں گئے اور اس کے بعد ہم سید الشہدا (ع) کے حرم کی طرف آئے بچی کی جونہی حرم امام حسین(ع) کے گنبد پر نگاہ پڑی تو وہ بے ساختہ رونے لگی اور کہنے لگی مولا میں آپ کے پاس آئی ہوں آپ ہمارے مولا ہیں آپ ہمارے آقا ہیں ایسے ہی ان سے باتیں کررہی تھی اور ہم اسے ویلچیئر پر لے کر حرم میں داخل ہوئے جونہی اس کی نگاہ ضریح مطھر پر پڑی تو وہ خود بخود اٹھ کر ضریح کی طرف دوڑی اور ضریح سے جا کر لپٹ گئی۔

 

 

Last Updated on Thursday, 25 December 2014 14:38
 

FORM_HEADER


FORM_CAPTCHA
FORM_CAPTCHA_REFRESH